Posted in شاعری

محبت دائمی سچ 

ﮨﻢ ﺍﮐﺜﺮ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﺟﺴﮯ ﮨﻢ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

ﺍﺳﮯ ﮨﻢ ﭼﮭﻮﮌ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ

ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ

ﻣﺤﺒّﺖ ﺩﺍﺋﻤﯽ ﺳﭻ ﮨﮯ

ﻣﺤﺒّﺖ ﭨﮭﮩﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ

ﻣﺤﺒّﺖ ﭨﮭﮩﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ…

ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ

ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ

ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﮐﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮتی
ﮐﺒﮭﯽ ﺍﻧﺠﺎﻥ ﺳﮯ ﻏﻢ ﻣﯿﮟ

ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ

ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺑﺮِ ﺭﻭﺍﮞ ﺑﻦ ﮐﺮ

ﮐﺒﮭﯽ ﻗﻄﺮﮮ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ

ﻣﺤﺒّﺖ ﭨﮭﮩﺮ ﺟﺎﺗﯽ ہے

ﯾﮧ ﮨﺮﮔﺰ ﮐﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮتی

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s